محفل شعر و سخن

غزل

عاصم قادری

 

نہ کہیں  میرا     نشیمن   نہ کہیں  میرا چمن  ہے

میں بچھڑ گیا ہوں جس سے وہ کہاں میرا وطن ہے

 

میرے خون پا کی برکت ہے عیاں صحن صحن میں

میں جدھر جدھر گیا ہوں   وہاں  فصل  نسترن  ہے

 

میں چمن میں پھر رہا تھا تو خزاں نے مجھ کو لوٹا

تیرے در پہ  آ گیا ہوں   تو یہاں  بھی راہزن    ہے

 

مجھے کیا پلا دیا ہے  تیرے دست  مرمریں نے

میری  آرزو جواں ہے مرے دل میں بانکپن ہے

 

انھیں  ہر ادا  پہ  شکوہ  ہے گلہ  شکایتیں  ہیں

میرا ظرف عاشقی ہے  یہ جفا پہ خندہ زن ہے

 

وہ سلیقہ ء محبت  جو دیا تھا تو نے  مجھ کو

وہی بندگی عطاعت مرے دل میں موجزن ہے

 

میں پکارتا ہوں تجھ کو میں بلا رہا ہوں تجھ کو

تیرے وصل کی تمنا میرے دل میں موجزن ہے

 

میری زندگی کا حاصل ہیں یہ سنگ وخشت عاصم

نہ گلاب و لالہ مجھ کو  نہ کوئی میرا  سمن  ہے

 

ڈاکٹر عاصم قادری      رکن اردو انجمن برلن

انسان ابھی زندہ ہے

عارف نقوی

 

     نیم کے پیڑ تلے

     زرد پتوں میں دبے

     گرد اٹے

     خاک سنے

     سوچتا ہوں

 

    میں مغنی تھا ہمہ وقت چہکتا تھا میں

    گنگناتا  کبھی  للکار سناتا تھا میں

    میں ہںساتا تھا  رلاتا تھا  جگاتا تھا میں

    درد کے ساز سے دنیا کو ہلاتا تھا میں

    گیت شعلے تھے تو اشعار میں الفت کی ترنگ

    میرے افسانوں میں مظلوم کی آہوں کي صدا

    میں مجاہد تھا، معلم تھا،  صحافی تھا میں

    ایک فنکار تھا دل کھول کے رکھ دیتا تھا

    میرے الفاظ تھے دنیا کو پیام الفت

    میرے ا فکار تھے انساں کی بقا اور نجات

    امن و انصاف و مساوات کے  پنہاں سرگم

    نور کے سانچے میں صد رنگ چمن حسن جہاں

    اب نہ شاعر ہوں  نہ فنکار و صحافی ہوں میں

    میں معلم بھی نہیں درس کے قابل بھی نہیں

    تھک گیا ہوں میرے الفاظ میں قوت بھی نہیں

    مر گیا ہوں میرے اعصاب میں حرکت بھی نہیں

    جسم خاموش ہے اب کوئ مداوا بھی نہیں

 

    نیم کے پیڑ تلے

    زرد پتوں میں دبے

    گرد اٹے

    خاک سنے

    سوچتا ہوں

 

    دل یہ کہتا ہے کہ انسان ابھی زندہ ہے

    تو بھی زندہ  ترا ایمان ابھی زندہ ہے

    تیری تربت پہ ابھی مرثیہ خوانی ہو گی

    پھول مہکیں گے کبھی نغمہ سرائی ہو گی

    خواب جاگیں گے ترے

    رنگ جہاں بدلے گا

    نوع انسان کے جینے کا چلن بدلے گا

 

    دل یہ کہتا ہے کہ انسان ابھی زندہ ہے

    تو بھی  زندہ  ترا ایمان ابھی زندہ ہے

 

 

عارف نقوی   صدر  اردو انجمن برلن

اشعار

عشرت معین سیما

زہر کے گھونٹ پینے پڑتے ہیں باتیں جب ان کی فاش ہوتی ہیں

آئینا   مسکراتا   رہتا   ہے   حیرتیں   پاش  پاش      ہوتی   ہیں

۔

میری ہر بات کوگرواجبی سمجھے ہو تو سمجھو

تم اپنا فیصلہ ہی آخری سمجھے ہو   تو سمجھو

تمھارے نام کا سورج میرے ماتھے چمکتا ہے

شب الفت کو گر تم تیرگی سمجھے ہو تو سمجھو

 

 

عشرت معین سیما

اشعار

 

انور ظہیر رہبر

دریا   ہے اپنا    نہ ہی   اپنا ہے     سمندر

ہر شب کو جو چھوتا ہے سپنا ہے سمندر

۔

شاعری کا بھی اک الہام ہے مجھ میں

یعنی نزاکت حسن کلام ہے مجھ میں

وہ کبھی ٹوٹ کے چاہے یہ آرزو ہی رہی

منتظر شدت عشق ہنگام ہے مجھ مبئ

۔

جو میخانے حکومت کی خلعت پہنے ہیں

فکر   اذہان  سے   بیمار   نظر آتے ہیں

انور ظہیر رہبر

 


Kostenlose Webseite von Beepworld
 
Verantwortlich für den Inhalt dieser Seite ist ausschließlich der
Autor dieser Homepage, kontaktierbar über dieses Formular!